اس کی جب بزم سے ہم ہو کے بتنگ آتے ہیں

میر حسن

اس کی جب بزم سے ہم ہو کے بتنگ آتے ہیں

میر حسن

MORE BYمیر حسن

    اس کی جب بزم سے ہم ہو کے بتنگ آتے ہیں

    اپنے ساتھ آپ ہی کرتے ہوے جنگ آتے ہیں

    حسن میں جب تئیں گرمی نہ ہو جی دیوے کون

    شمع تصویر کے کب گرد پتنگ آتے ہیں

    دل کو کس بو قلموں جلوہ نے ہے خون کیا

    اشک آنکھوں سے جو یہ رنگ برنگ آتے ہیں

    آہ تعظیم کو اٹھتی ہے مرے سینہ سے

    دل پہ جب اس کی نگاہوں کے خدنگ آتے ہیں

    شرط گر پوچھو تو ہے اس میں بھی قسمت ورنہ

    عاشقی کرنے کے ہر ایک کو ڈھنگ آتے ہیں

    نخل وحشت بھی مگر ان کا ثمر رکھتا ہے

    ہر طرف سے جو یہ دیواروں پہ سنگ آتے ہیں

    حیرت افزا ہے عجب کوچۂ دل دار حسنؔ

    جو وہاں جاتے ہیں اس طرف سے دنگ آتے ہیں

    مأخذ :
    • Deewan-e-Meer Hasan

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY