اس کی خواہش ہے یہی حرف وضاحت کے بغیر

پیرزادہ قاسم

اس کی خواہش ہے یہی حرف وضاحت کے بغیر

پیرزادہ قاسم

MORE BYپیرزادہ قاسم

    اس کی خواہش ہے یہی حرف وضاحت کے بغیر

    اب کوئی خواب بھی دیکھے نہ اجازت کے بغیر

    ہم کو ڈھونڈو تو ہمیں کھونے کی خاطر ڈھونڈو

    خواب تعبیر نہیں ہوتے ہیں حسرت کے بغیر

    دل کو اک کار مسلسل نے رکھا ہے آباد

    ایک لمحہ بھی نہیں گزرا محبت کے بغیر

    یوں بھی دشوار ہے آسودۂ صحرا ہونا

    اور جب خاک بھی ہو جانا ہو وحشت کے بغیر

    وقت سفاک ہے اتنا کبھی سوچا بھی نہ تھا

    ہم اسے یاد نہ کر پائیں گے زحمت کے بغیر

    ہم ترے قریۂ جاں تاب میں اتنا ٹھہرے

    یعنی اک لمحہ گزار آئے ہیں عجلت کے بغیر

    اب تو ہم خود سے بھی کم کم ہی ملا کرتے ہیں

    کسی خواہش سے الگ اور ضرورت کے بغیر

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY