اس کی نظروں میں انتخاب ہوا

جگر مراد آبادی

اس کی نظروں میں انتخاب ہوا

جگر مراد آبادی

MORE BYجگر مراد آبادی

    اس کی نظروں میں انتخاب ہوا

    دل عجب حسن سے خراب ہوا

    عشق کا سحر کامیاب ہوا

    میں ترا تو مرا جواب ہوا

    ہر نفس موج اضطراب ہوا

    زندگی کیا ہوئی عذاب ہوا

    جذبۂ شوق کامیاب ہوا

    آج مجھ سے انہیں حجاب ہوا

    میں بنوں کس لیے نہ مست شراب

    کیوں مجسم کوئی شباب ہوا

    نگۂ ناز لے خبر ورنہ

    درد محبوب اضطراب ہوا

    میری بربادیاں درست مگر

    تو بتا کیا تجھے ثواب ہوا

    عین قربت بھی عین فرقت بھی

    ہائے وہ قطرہ جو حباب ہوا

    مستیاں ہر طرف ہیں آوارہ

    کون غارت گر شراب ہوا

    دل کو چھونا نہ اے نسیم کرم

    اب یہ دل روکش حباب ہوا

    عشق بے امتیاز کے ہاتھوں

    حسن خود بھی شکست یاب ہوا

    جب وہ آئے تو پیشتر سب سے

    میری آنکھوں کو اذن خواب ہوا

    دل کی ہر چیز جگمگا اٹھی

    آج شاید وہ بے نقاب ہوا

    دور ہنگامۂ نشاط نہ پوچھ

    اب وہ سب کچھ خیال و خواب ہوا

    تو نے جس اشک پر نظر ڈالی

    جوش کھا کر وہی شراب ہوا

    ستم خاص یار کی ہے قسم

    کرم یار بے حساب ہوا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY