اس کو جدا ہوئے بھی زمانہ بہت ہوا

احمد فراز

اس کو جدا ہوئے بھی زمانہ بہت ہوا

احمد فراز

MORE BY احمد فراز

    اس کو جدا ہوئے بھی زمانہ بہت ہوا

    اب کیا کہیں یہ قصہ پرانا بہت ہوا

    ڈھلتی نہ تھی کسی بھی جتن سے شب فراق

    اے مرگ ناگہاں ترا آنا بہت ہوا

    ہم خلد سے نکل تو گئے ہیں پر اے خدا

    اتنے سے واقعے کا فسانہ بہت ہوا

    اب ہم ہیں اور سارے زمانے کی دشمنی

    اس سے ذرا سا ربط بڑھانا بہت ہوا

    اب کیوں نہ زندگی پہ محبت کو وار دیں

    اس عاشقی میں جان سے جانا بہت ہوا

    اب تک تو دل کا دل سے تعارف نہ ہو سکا

    مانا کہ اس سے ملنا ملانا بہت ہوا

    کیا کیا نہ ہم خراب ہوئے ہیں مگر یہ دل

    اے یاد یار تیرا ٹھکانہ بہت ہوا

    کہتا تھا ناصحوں سے مرے منہ نہ آئیو

    پھر کیا تھا ایک ہو کا بہانہ بہت ہوا

    لو پھر ترے لبوں پہ اسی بے وفا کا ذکر

    احمد فرازؔ تجھ سے کہا نہ بہت ہوا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    بھارتھی وشواناتھن

    بھارتھی وشواناتھن

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    اس کو جدا ہوئے بھی زمانہ بہت ہوا نعمان شوق

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY