اس نظر کی شراب پیتا ہوں

شعری بھوپالی

اس نظر کی شراب پیتا ہوں

شعری بھوپالی

MORE BYشعری بھوپالی

    اس نظر کی شراب پیتا ہوں

    بادۂ کامیاب پیتا ہوں

    پردہ داریٔ نظم کن کی خیر

    آج میں بے حجاب پیتا ہوں

    جھوم جاتے ہیں عرش و کوثر و خلد

    جھوم کر جب شراب پیتا ہوں

    رحمتیں بے حساب ہوتی ہیں

    میں جہاں بے حساب پیتا ہوں

    سادہ، سادہ نگاہوں کے نثار

    ہلکی ہلکی شراب پیتا ہوں

    اف یہ میرا جلال بادہ کشی

    گھول کر آفتاب پیتا ہوں

    ضبط اور ضبط مستقل شعریؔ

    ٹھنڈی ٹھنڈی شراب پیتا ہوں

    مآخذ:

    • کتاب : Karwaan-e-Ghazal (Pg. 114)
    • Author : Farooq Argali
    • مطبع : Farid Book Depot (Pvt.) Ltd (2004)
    • اشاعت : 2004

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY