اس سے کیا خاک ہم نشیں بنتی

داغؔ دہلوی

اس سے کیا خاک ہم نشیں بنتی

داغؔ دہلوی

MORE BY داغؔ دہلوی

    اس سے کیا خاک ہم نشیں بنتی

    بات بگڑی ہوئی نہیں بنتی

    وہ بنی ابتدائے الفت میں

    دم پہ جو وقت واپسیں بنتی

    آدمی سب فرشتے بن جاتے

    آسماں پر اگر زمیں بنتی

    میری صورت بنی تو خاک بنی

    قسمت اے صورت آفریں بنتی

    وعدے کرتے ہی کیا وہ آ جاتے

    رات بھر زلف عنبریں بنتی

    کاش سنتا نہ کوئی شور و فغاں

    دل کی جا چشم سرمگیں بنتی

    تو نے ایسے بگاڑ ڈالے ہیں

    ایک کی ایک سے نہیں بنتی

    نہ چمکتی جو حسن کی تقدیر

    کیوں تری چاند سی جبیں بنتی

    پارۂ جیب سے مرے اے کاش

    دست وحشت کی آستیں بنتی

    بزم دنیا تھی قابل جنت

    خوب بنتی اگر یہیں بنتی

    طبع نازک کا لطف جب تھا داغؔ

    نازنینوں میں نازنیں بنتی

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    اس سے کیا خاک ہم نشیں بنتی نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites