اس سے پہچان ہو گئی ہوگی

حبیب کیفی

اس سے پہچان ہو گئی ہوگی

حبیب کیفی

MORE BYحبیب کیفی

    اس سے پہچان ہو گئی ہوگی

    راہ آسان ہو گئی ہوگی

    جینے مرنے کا ایک ہی سامان

    اس کی مسکان ہو گئی ہوگی

    معاملہ دل کا جب کھلا ہوگا

    عقل حیران ہو گئی ہوگی

    لوگ پھرتے ہیں مارے مارے کیوں

    بند دوکان ہو گئی ہوگی

    جس نے بتلایا بے لباس اسے

    آفت جان ہو گئی ہوگی

    چالیے پھر راہ دیکھ لیتے ہیں

    راہ سنسان ہو گئی ہوگی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY