اس سے رشتہ ہے ابھی تک میرا

احمد محفوظ

اس سے رشتہ ہے ابھی تک میرا

احمد محفوظ

MORE BYاحمد محفوظ

    دلچسپ معلومات

    شمارہ 232 دسمبر 1999

    اس سے رشتہ ہے ابھی تک میرا

    وہ علاقہ ہے ابھی تک میرا

    کس توقع نے جگایا تھا مجھے

    خواب تازہ ہے ابھی تک میرا

    کیا بتاؤں میں لب دریا سے

    کچھ تقاضا ہے ابھی تک میرا

    کہیں یک دشت ہوا چمکتی تھی

    شہر اندھا ہے ابھی تک میرا

    اک ذرا خود کو سمیٹوں تو چلوں

    کام پھیلا ہے ابھی تک میرا

    وہی صحرا ہے وہی رنج سفر

    وہی قصہ ہے ابھی تک میرا

    مأخذ :
    • کتاب : Shabkhoon (Urdu Monthly) (Pg. 672)
    • Author : Shamsur Rahman Faruqi
    • مطبع : Shabkhoon Po. Box No.13, 313 rani Mandi Allahabad (June December 2005áIssue No. 293 To 299âPart II)
    • اشاعت : June December 2005áIssue No. 293 To 299âPart II

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY