اسے چھوتے ہوئے بھی ڈر رہا تھا

انجم سلیمی

اسے چھوتے ہوئے بھی ڈر رہا تھا

انجم سلیمی

MORE BYانجم سلیمی

    اسے چھوتے ہوئے بھی ڈر رہا تھا

    وہ میرا پہلا پہلا تجربہ تھا

    اگرچہ دکھ ہمارے مشترک تھے

    مگر جو دو دلوں میں فاصلہ تھا

    کبھی اک دوسرے پر کھل نہ پائے

    ہمارے درمیاں اک تیسرا تھا

    وہ اک دن جانے کس کو یاد کر کے

    مرے سینے سے لگ کے رو پڑا تھا

    اسے بھی پیار تھا اک اجنبی سے

    مرے بھی دھیان میں اک دوسرا تھا

    بچھڑتے وقت اس کو فکر کیوں تھی

    بسر کرنی تو میرا مسئلہ تھا

    وہ جب سمجھا مجھے اس وقت انجمؔ

    مرا معیار ہی بدلا ہوا تھا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY