اسی کنارۂ حیرت سرا کو جاتا ہوں

ثروت حسین

اسی کنارۂ حیرت سرا کو جاتا ہوں

ثروت حسین

MORE BYثروت حسین

    اسی کنارۂ حیرت سرا کو جاتا ہوں

    میں اک سوار ہوں کوہ ندا کو جاتا ہوں

    رمیدگی کا بیاباں ہے اور بے خور و خواب

    غبار کرتا سکوت و صدا کو جاتا ہوں

    قریب ہی کسی خیمے سے آگ پوچھتی ہے

    کہ اس شکوہ سے کس قرطبہ کو جاتا ہوں

    حذر کہ دجلۂ دشوار پر قدم رکھتا

    شکارگاہ فرات و فنا کو جاتا ہوں

    کہاں گئے وہ خدایان درہم و دینار

    کہ اک دفینۂ دشت بلا کو جاتا ہوں

    سفارت حد حیرانگی پہ ہوں مامور

    نگار خانۂ حسن و ادا کو جاتا ہوں

    وہ دن بھی آئے کہ انکار کر سکوں ثروتؔ

    ابھی تو معبد حمد و ثنا کو جاتا ہوں

    مآخذ:

    • کتاب : meyaar (Pg. 322)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY