وعدۂ وصلت سے دل ہو شاد کیا

مومن خاں مومن

وعدۂ وصلت سے دل ہو شاد کیا

مومن خاں مومن

MORE BYمومن خاں مومن

    وعدۂ وصلت سے دل ہو شاد کیا

    تم سے دشمن کی مبارک باد کیا

    کچھ قفس میں ان دنوں لگتا ہے جی

    آشیاں اپنا ہوا برباد کیا

    نالۂ پیہم سے یاں فرصت نہیں

    حضرت ناصح کریں ارشاد کیا

    ہیں اسیر اس کے جو ہے اپنا اسیر

    ہم نہ سمجھے صید کیا صیاد کیا

    شوخ بازاری تھی شیریں بھی مگر

    ورنہ فرق خسرو و فرہاد کیا

    نشۂ الفت سے بھولے یار کو

    سچ ہے ایسی بے خودی میں یاد کیا

    نالہ اک دم میں اڑا ڈالے دھوئیں

    چرخ کیا اور چرخ کی بنیاد کیا

    جب مجھے رنج دل آزاری نہ ہو

    بے وفا پھر حاصل بیداد کیا

    پانوں تک پہنچی وہ زلف خم بہ خم

    سرو کو اب باندھئے آزاد کیا

    کیا کروں اللہ سب ہیں بے اثر

    ولولہ کیا نالہ کیا فریاد کیا

    ان نصیبوں پر کیا اختر شناس

    آسماں بھی ہے ستم ایجاد کیا

    روز محشر کی توقع ہے عبث

    ایسی باتوں سے ہو خاطر شاد کیا

    گر بہائے خون عاشق ہے وصال

    انتقام زحمت جلاد کیا

    بت کدہ جنت ہے چلیے بے ہراس

    لب پہ مومنؔ ہرچہ بادا باد کیا

    RECITATIONS

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    وعدۂ وصلت سے دل ہو شاد کیا فصیح اکمل

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY