وفائے دوستاں کیسی جفائے دشمناں کیسی

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

وفائے دوستاں کیسی جفائے دشمناں کیسی

وحشتؔ رضا علی کلکتوی

MORE BYوحشتؔ رضا علی کلکتوی

    وفائے دوستاں کیسی جفائے دشمناں کیسی

    نہ پوچھا ہو کسی نے جس کو اس کی داستاں کیسی

    کچھ ایسا احترام درد الفت ہے مرے دل کو

    خموشی حکمراں ہے آہ و فریاد و فغاں کیسی

    کسی کو فکر آزادی نہیں اس قید رنگیں سے

    دل عالم پہ ہے چھائی ہوئی مہر بتاں کیسی

    بھلا ہی دیتے ہیں اس کو جو گزرا بزم عالم سے

    ہے سب کو اپنی اپنی فکر یاد رفتگاں کیسی

    تمہارا مدعا ہی جب سمجھ میں کچھ نہیں آیا

    تو پھر مجھ پر نظر ڈالی یہ تم نے مہرباں کیسی

    ابھی ہوتے اگر دنیا میں داغؔ دہلوی زندہ

    تو وہ سب کو بتا دیتے ہے وحشتؔ کی زباں کیسی

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    وفائے دوستاں کیسی جفائے دشمناں کیسی نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY