وفا کے ہیں خوان پر نوالے ز آب اول دوم بہ آتش

حسرتؔ عظیم آبادی

وفا کے ہیں خوان پر نوالے ز آب اول دوم بہ آتش

حسرتؔ عظیم آبادی

MORE BYحسرتؔ عظیم آبادی

    وفا کے ہیں خوان پر نوالے ز آب اول دوم بہ آتش

    بھرے ہے ساقی یہاں پیالے ز آب اول دوم بہ آتش

    چمن میں جوش جنوں کے ہیں اشک اور داغ دروں سے اپنے

    کروں شگفتہ گل اور لالے ز آب اول دوم بہ آتش

    ہمارے اشک اور آہ کی موجیں باندھ دیتی ہیں سب جو دوری

    بنے ہیں ماہ فلک پہ ہالے ز آب اول دوم بہ آتش

    جہاں کے سب گرم و سرد دیکھے نہ ذوق ہے ان میں کچھ نہ لذت

    دو روز چھاتی یہاں پکالے ز آب اول دوم بہ آتش

    دو حکم ہیں شاہ عشق کے ان میں ایک گلنا ہے ایک جلنا

    ہیں دفتر درد میں قبالے ز آب اول دوم بہ آتش

    نہ کھول واعظ کتاب دانش کہ آتش عشق و آب مے سے

    دھوؤں جلاؤں ترے رسالے ز آب اول دوم بہ آتش

    ستم ہے آفت ہے مہر یا کیں بلا یہ عشق ستیزہ گر کی

    دلوں کے خانے اجاڑ ڈالے ز آب اول دوم بہ آتش

    پڑے ہیں ہم خون دل میں غلطاں جگر ہے داغ جفا سے سوزاں

    کوئی ہے اپنے تئیں سنبھالے ز آب اول دوم بہ آتش

    وصال کی جستجو میں حسرتؔ چلا نہ زاری نہ زور کا کچھ

    بہت سے یاں ہم نے ڈھب نکالے ز آب اول دوم بہ آتش

    مآخذ
    • Deewan-e-Hasrat Azeemabadi

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY