وہاں ہر ایک اسی نشۂ انا میں ہے

اسلم عمادی

وہاں ہر ایک اسی نشۂ انا میں ہے

اسلم عمادی

MORE BYاسلم عمادی

    وہاں ہر ایک اسی نشۂ انا میں ہے

    کہ خاک رہ گزر یار بھی ہوا میں ہے

    الف سے نام ترا تیرے نام سے میں الف

    الٰہی میرا ہر اک درد اس دعا میں ہے

    وہی کسیلی سی لذت وہی سیاہ مزہ

    جو صرف ہوش میں تھا حرف ناروا میں ہے

    وہ کوئی تھا جو ابھی اٹھ کے درمیاں سے گیا

    حساب کیجے تو ہر ایک اپنی جا میں ہے

    نمی اتر گئی دھرتی میں تہہ بہ تہہ اسلمؔ

    بہار اشک نئی رت کی ابتدا میں ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY