Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

وہاں پہنچ کے ہر اک نقش غم پرایا تھا

خلیل تنویر

وہاں پہنچ کے ہر اک نقش غم پرایا تھا

خلیل تنویر

MORE BYخلیل تنویر

    وہاں پہنچ کے ہر اک نقش غم پرایا تھا

    وہ راستہ کہ جہاں حوصلہ بھی ہارا تھا

    بہت عزیز تھے اس کو سفر کے ہنگامے

    وہ سب کے ساتھ چلا تھا مگر اکیلا تھا

    وہ زخم زخم تھا تیرہ شبی کے دامن میں

    لبوں پہ پھول نظر میں کرن بھی رکھتا تھا

    عجیب شخص تھا اس کو سمجھنا مشکل ہے

    کنارے آب کھڑا تھا مگر وہ پیاسا تھا

    اسے خبر تھی کہ آشوب آگہی کیا ہے

    وہ درد و غم جسے اپنی زباں میں کہتا تھا

    مأخذ :
    • کتاب : Gil-e-Lajvard (Pg. 108)
    • Author : Khaleel Tanveer
    • مطبع : Al-asr Publications, Ahmedabad (2005)
    • اشاعت : 2005

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے