وہم و گماں جو حد سے گزرتے چلے گئے

عارف اعظمی

وہم و گماں جو حد سے گزرتے چلے گئے

عارف اعظمی

MORE BYعارف اعظمی

    وہم و گماں جو حد سے گزرتے چلے گئے

    ہم ریزہ ریزہ ہو کے بکھرتے چلے گئے

    جلوہ تمہارا ایک نظر دیکھنے کے بعد

    دل میں نقوش عشق نکھرتے چلے گئے

    اعجاز کم نہیں تھا کچھ ان کے جمال کا

    ہم دید کی طلب میں سنورتے چلے گئے

    دیں منزلوں نے ان کو صدائیں بہت مگر

    دیوانے اپنی دھن میں گزرتے چلے گئے

    شاید مری وفاؤں میں ہی تھی کوئی کمی

    وعدے سے اپنے وہ تو مکرتے چلے گئے

    ایسے پرند جن کی اڑانیں بلند تھیں

    ان کے پروں کو لوگ کترتے چلے گئے

    عارفؔ رہ حیات میں نیکی کے نام پر

    جو کام ہم کو کرنے تھے کرتے چلے گئے

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY