ویسے ہی خیال آ گیا ہے

ادا جعفری

ویسے ہی خیال آ گیا ہے

ادا جعفری

MORE BYادا جعفری

    ویسے ہی خیال آ گیا ہے

    یا دل میں ملال آ گیا ہے

    آنسو جو رکا وہ کشت جاں میں

    بارش کی مثال آ گیا ہے

    غم کو نہ زیاں کہو کہ دل میں

    اک صاحب حال آ گیا ہے

    جگنو ہی سہی فصیل شب میں

    آئینہ خصال آ گیا ہے

    آ دیکھ کہ میرے آنسوؤں میں

    یہ کس کا جمال آ گیا ہے

    مدت ہوئی کچھ نہ دیکھنے کا

    آنکھوں کو کمال آ گیا ہے

    میں کتنے حصار توڑ آئی

    جینا تھا محال آ گیا ہے

    مآخذ:

    • کتاب : Nuquush (Pg. 474)
    • Author : Mohammad Tufail
    • مطبع : Idara-e-Frog-e-Urdu, Lahore (1985,Issue No. 132)
    • اشاعت : 1985,Issue No. 132

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY