وجہ قدر و قیمت دل حسن کی تنویر ہے

شکیل بدایونی

وجہ قدر و قیمت دل حسن کی تنویر ہے

شکیل بدایونی

MORE BYشکیل بدایونی

    وجہ قدر و قیمت دل حسن کی تنویر ہے

    ورنہ اک ٹوٹے ہوئے شیشے کی کیا توقیر ہے

    کچھ تبسم زیر لب پر شرم دامن گیر ہے

    اف یہ کس عالم میں کھنچوائی ہوئی تصویر ہے

    اک نظر دیکھا جسے مدہوش و بیخود کر دیا

    تیری کیف آگیں نگاہوں میں عجب تاثیر ہے

    کتنی دلکش ہیں تری تصویر کی رعنائیاں

    لیکن اے پردہ نشیں تصویر پھر تصویر ہے

    پھونک دے برق تپاں میرا قفس بھی پھونک دے

    آشیاں کی بھی تو اک بگڑی ہوئی تصویر ہے

    لن ترانی کہہ دیا تھا طور پر جس نے شکیلؔ

    ذرے ذرے میں اسی کے حسن کی تصویر ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY