وقت غروب آج کرامات ہو گئی

فراق گورکھپوری

وقت غروب آج کرامات ہو گئی

فراق گورکھپوری

MORE BYفراق گورکھپوری

    وقت غروب آج کرامات ہو گئی

    زلفوں کو اس نے کھول دیا رات ہو گئی

    کل تک تو اس میں ایسی کرامت نہ تھی کوئی

    وہ آنکھ آج قبلۂ حاجات ہو گئی

    اے سوز عشق تو نے مجھے کیا بنا دیا

    میری ہر ایک سانس مناجات ہو گئی

    اوچھی نگاہ ڈال کے اک سمت رکھ دیا

    دل کیا دیا غریب کی سوغات ہو گئی

    کچھ یاد آ گئی تھی وہ زلف شکن شکن

    ہستی تمام چشمۂ ظلمات ہو گئی

    اہل وطن سے دور جدائی میں یار کی

    صبر آ گیا فراقؔ کرامات ہو گئی

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    وقت غروب آج کرامات ہو گئی نعمان شوق

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY