وقت کے بے ڈھب رستوں پر اور الٹی سیدھی چال میں خوش

عزیز نبیل

وقت کے بے ڈھب رستوں پر اور الٹی سیدھی چال میں خوش

عزیز نبیل

MORE BYعزیز نبیل

    وقت کے بے ڈھب رستوں پر اور الٹی سیدھی چال میں خوش

    دیکھو کیسے رہتے ہیں ہم دنیا کے جنجال میں خوش

    جانے والا سال تو پھر بھی جیسے تیسے بیت گیا

    اس دنیا کو رکھنا مولا آنے والے سال میں خوش

    اک منظر کی شادابی نے یوں ہم کو خوش رنگ کیا

    موسم موسم پھرتے ہیں اور رہتے ہیں ہر حال میں خوش

    مرگ محبت اور اس کے اسباب پہ آخر روئے کون

    وہ بھی خود میں مست مگن ہے میں بھی اپنے حال میں خوش

    تم مانگے کا ریشم پہنو عیش کرو ہاں لیکن ہم

    خود داری کی پھٹی پرانی ایک اکیلی شال میں خوش

    اک بچے کی آنکھ میں جیسے روشن ہو معصوم خوشی

    بالکل ایسے ہوتے ہیں ہم آپ کے استقبال میں خوش

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY