وسوسے دل میں نہ رکھ خوف رسن لے کے نہ چل

ابرار کرتپوری

وسوسے دل میں نہ رکھ خوف رسن لے کے نہ چل

ابرار کرتپوری

MORE BY ابرار کرتپوری

    وسوسے دل میں نہ رکھ خوف رسن لے کے نہ چل

    عزم منزل ہے تو ہمراہ تھکن لے کے نہ چل

    راہ منزل میں بہر حال تبسم فرما

    ہر قدم دکھ سہی ماتھے پہ شکن لے کے نہ چل

    نور ہی نور سے وابستہ اگر رہنا ہے

    سر پہ سورج کو اٹھا صرف کرن لے کے نہ چل

    پہلے فولاد بنا جسم کو اپنے اے دوست

    بارش سنگ میں شیشہ سا بدن لے کے نہ چل

    آس انصاف کی منصف سے نہیں ہے تو نہ رکھ

    ناامیدی کی مگر دل میں چبھن لے کے نہ چل

    مآخذ:

    • کتاب : Roshani Takhayyul ki (Pg. 50)
    • Author : Abrar Kiratpuri
    • مطبع : Markaz-e-ilm-o-Danish Qudsiya Manzil (2006)
    • اشاعت : 2006

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY