وے صورتیں الٰہی کس ملک بستیاں ہیں

محمد رفیع سودا

وے صورتیں الٰہی کس ملک بستیاں ہیں

محمد رفیع سودا

MORE BYمحمد رفیع سودا

    وے صورتیں الٰہی کس ملک بستیاں ہیں

    اب دیکھنے کو جن کے آنکھیں ترستیاں ہیں

    آیا تھا کیوں عدم میں کیا کر چلا جہاں میں

    یہ مرگ و زیست تجھ بن آپس میں ہنستیاں ہیں

    کیونکر نہ ہو مشبک شیشہ سا دل ہمارا

    اس شوخ کی نگاہیں پتھر میں دھنستیاں ہیں

    برسات کا تو موسم کب کا نکل گیا پر

    مژگاں کی یہ گھٹائیں اب تک برستیاں ہیں

    لیتے ہیں چھین کر دل عاشق کا پل میں دیکھو

    خوباں کی عاشقوں پر کیا پیش دستیاں ہیں

    اس واسطے کہ ہیں یہ وحشی نکل نہ جاویں

    آنکھوں کو میری مژگاں ڈوروں سے کستیاں ہیں

    قیمت میں ان کے گو ہم دو جگ کو دے چکے اب

    اس یار کی نگاہیں تس پر بھی سستیاں ہیں

    ان نے کہا یہ مجھ سے اب چھوڑ دخت رز کو

    پیری میں اے دوانے یہ کون مستیاں ہیں

    جب میں کہا یہ اس سے سوداؔ سے اپنے مل کے

    اس سال تو ہے ساقی اور مے پرستیاں ہیں

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    عابدہ پروین

    عابدہ پروین

    RECITATIONS

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    فصیح اکمل

    وے صورتیں الٰہی کس ملک بستیاں ہیں فصیح اکمل

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY