وہ ابھی سوچ کے اٹھا ہے مجھے

رتو کوشک

وہ ابھی سوچ کے اٹھا ہے مجھے

رتو کوشک

MORE BY رتو کوشک

    وہ ابھی سوچ کے اٹھا ہے مجھے

    یہ سچ ہے یا مغالطہ ہے مجھے

    ایک ٹوٹی ہوئی عمارت ہوں

    آج کل کون دیکھتا ہے مجھے

    میں یہاں ہر شجر سے واقف ہوں

    دشت مدت سے جانتا ہے مجھے

    سچ تو بولوں مگر سلیقے سے

    روز یہ مشورہ ملا ہے مجھے

    میرے اندر سے کوئی چیختا ہے

    اور میں چپ ہوں کیا ہوا ہے مجھے

    موت نے روح بھر نکالی ہے

    فکر نے پہلے کھا لیا ہے مجھے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY