وہ چاندنی کا بدن خوشبوؤں کا سایا ہے

بشیر بدر

وہ چاندنی کا بدن خوشبوؤں کا سایا ہے

بشیر بدر

MORE BY بشیر بدر

    وہ چاندنی کا بدن خوشبوؤں کا سایا ہے

    بہت عزیز ہمیں ہے مگر پرایا ہے

    اتر بھی آؤ کبھی آسماں کے زینے سے

    تمہیں خدا نے ہمارے لیے بنایا ہے

    کہاں سے آئی یہ خوشبو یہ گھر کی خوشبو ہے

    اس اجنبی کے اندھیرے میں کون آیا ہے

    مہک رہی ہے زمیں چاندنی کے پھولوں سے

    خدا کسی کی محبت پہ مسکرایا ہے

    اسے کسی کی محبت کا اعتبار نہیں

    اسے زمانے نے شاید بہت ستایا ہے

    تمام عمر مرا دل اسی دھوئیں میں گھٹا

    وہ اک چراغ تھا میں نے اسے بجھایا ہے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    چندن داس

    چندن داس

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY