وہ دل نصیب ہوا جس کو داغ بھی نہ ملا

جلالؔ لکھنوی

وہ دل نصیب ہوا جس کو داغ بھی نہ ملا

جلالؔ لکھنوی

MORE BYجلالؔ لکھنوی

    وہ دل نصیب ہوا جس کو داغ بھی نہ ملا

    ملا وہ غم کدہ جس میں چراغ بھی نہ ملا

    گئی تھی کہہ کے میں لاتی ہوں زلف یار کی بو

    پھری تو باد صبا کا دماغ بھی نہ ملا

    چراغ لے کے ارادہ تھا یار کو ڈھونڈیں

    شب فراق تھی کوئی چراغ بھی نہ ملا

    خبر کو یار کی بھیجا تھا گم ہوئے ایسے

    حواس رفتہ کا اب تک سراغ بھی نہ ملا

    جلالؔ باغ جہاں میں وہ عندلیب ہیں ہم

    چمن کو پھول ملے ہم کو داغ بھی نہ ملا

    مأخذ :
    • کتاب : Roomani Ghazlen (Pg. 62)
    • Author : Samina Hijab
    • مطبع : Maktaba Jamia Limited, New Delhi (1997)
    • اشاعت : 1997

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY