وہ دکھ جو سوئے ہوئے ہیں انہیں جگا دوں گا

ساقی فاروقی

وہ دکھ جو سوئے ہوئے ہیں انہیں جگا دوں گا

ساقی فاروقی

MORE BYساقی فاروقی

    وہ دکھ جو سوئے ہوئے ہیں انہیں جگا دوں گا

    میں آنسوؤں سے ہمیشہ ترا پتا دوں گا

    بجھے لبوں پہ ہے بوسوں کی راکھ بکھری ہوئی

    میں اس بہار میں یہ راکھ بھی اڑا دوں گا

    ہوا ہے تیز مگر اپنا دل نہ میلا کر

    میں اس ہوا میں تجھے دور تک صدا دوں گا

    مری صدا پہ نہ برسیں اگر تری آنکھیں

    تو حرف و صوت کے سارے دیے بجھا دوں گا

    جو اہل ہجر میں ہوتی ہے ایک دید کی رسم

    تری تلاش میں وہ رسم بھی اٹھا دوں گا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    وہ دکھ جو سوئے ہوئے ہیں انہیں جگا دوں گا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY