وہ ایک نام جو دریا بھی ہے کنارا بھی

اسعد بدایونی

وہ ایک نام جو دریا بھی ہے کنارا بھی

اسعد بدایونی

MORE BYاسعد بدایونی

    وہ ایک نام جو دریا بھی ہے کنارا بھی

    رہا ہے اس سے بہت رابطہ ہمارا بھی

    چمن وہی کہ جہاں پر لبوں کے پھول کھلیں

    بدن وہی کہ جہاں رات ہو گوارا بھی

    ہمیں بھی لمحۂ رخصت سے ہول آتا ہے

    جدا ہوا ہے کوئی مہرباں ہمارا بھی

    علامت شجر سایہ دار بھی وہ جسم

    خرابی دل و دیدہ کا استعارہ بھی

    افق تھکن کی ردا میں لپٹتا جاتا ہے

    سو ہم بھی چپ ہیں اور اس شام کا ستارا بھی

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    وہ ایک نام جو دریا بھی ہے کنارا بھی نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY