وہ ایک شخص کہ جو ساتھ ساتھ پھرتا تھا

خالد حسن قادری

وہ ایک شخص کہ جو ساتھ ساتھ پھرتا تھا

خالد حسن قادری

MORE BY خالد حسن قادری

    وہ ایک شخص کہ جو ساتھ ساتھ پھرتا تھا

    نظر جو بدلی تو پھر وہ نظر نہیں آیا

    پھرا کیے ہیں چہل سال دشت وحشت میں

    کسی کو یاد ترا رہ گزر نہیں آیا

    بہت جتایا کسی نے کہ ساتھ ساتھ تھا وہ

    ہمیں تو یاد کوئی ہم سفر نہیں آیا

    کہا تھا شام سے پہلے ہی لوٹ آئے گا

    ہمیں خیال رہا رات بھر نہیں آیا

    تھکے ہوئے تھے بہت بیٹھ جاتے سائے میں

    ہماری راہ میں کوئی شجر نہیں آیا

    یہ راہ کوہ ندا ہے قدم نہ اپنے بڑھا

    وہاں سے لوٹ کے کوئی بشر نہیں آیا

    بہت حدود زمان و مکاں سے دور گئے

    ہمیں تو راس کبھی بھی سفر نہیں آیا

    نہیں کہ یاد پتا اس کو میرے گھر کا نہ تھا

    تمام شہر میں گھوما ادھر نہیں آیا

    مثال سایہ تھا وہ پھر بھی دور دور رہا

    ہزار سال ہوئے لوٹ کر نہیں آیا

    رہا رقیب سے حجت میں قادریؔ مصروف

    مگر وہ لے کے تمہاری خبر نہیں آیا

    مآخذ:

    • کتاب : Sada-e-sher-e-fusu.n (Pg. 33)
    • Author : Khalid Hassan Qadrii
    • مطبع : Asif Javed (2001)
    • اشاعت : 2001

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY