وہ جلوہ طور پر جو دکھایا نہ جا سکا

واصف دہلوی

وہ جلوہ طور پر جو دکھایا نہ جا سکا

واصف دہلوی

MORE BYواصف دہلوی

    وہ جلوہ طور پر جو دکھایا نہ جا سکا

    آخر یہی ہوا کہ چھپایا نہ جا سکا

    آتے ہی ان کے دشت و جبل مسکرا اٹھے

    ایسے میں اپنا حال سنایا نہ جا سکا

    گردوں بھی اضطراب عزیزاں سے ہل گیا

    سوئے کچھ ایسے ہم کہ جگایا نہ جا سکا

    دامن کے داغ اشک ندامت نے دھو دئیے

    لیکن یہ دل کا داغ مٹایا نہ جا سکا

    کتنی گھٹائیں آئیں برس کر گزر گئیں

    شعلہ ہمارے دل کا بجھایا نہ جا سکا

    باتیں ہزار یوں تو حریفوں کی چھپ گئیں

    واصفؔ کا راز تھا جو چھپایا نہ جا سکا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    وہ جلوہ طور پر جو دکھایا نہ جا سکا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY