وہ جو اک شرط تھی وحشت کی اٹھا دی گئی کیا

عرفان صدیقی

وہ جو اک شرط تھی وحشت کی اٹھا دی گئی کیا

عرفان صدیقی

MORE BY عرفان صدیقی

    وہ جو اک شرط تھی وحشت کی اٹھا دی گئی کیا

    میری بستی کسی صحرا میں بسا دی گئی کیا

    وہی لہجہ ہے مگر یار ترے لفظوں میں

    پہلے اک آگ سی جلتی تھی بجھا دی گئی کیا

    جو بڑھی تھی کہ کہیں مجھ کو بہا کر لے جائے

    میں یہیں ہوں تو وہی موج بہا دی گئی کیا

    پاؤں میں خاک کی زنجیر بھلی لگنے لگی

    پھر مری قید کی میعاد بڑھا دی گئی کیا

    دیر سے پہنچے ہیں ہم دور سے آئے ہوئے لوگ

    شہر خاموش ہے سب خاک اڑا دی گئی کیا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    وہ جو اک شرط تھی وحشت کی اٹھا دی گئی کیا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY