وہ کون ہے جو پس چشم تر نہیں آتا

عباس تابش

وہ کون ہے جو پس چشم تر نہیں آتا

عباس تابش

MORE BYعباس تابش

    وہ کون ہے جو پس چشم تر نہیں آتا

    سمجھ تو آتا ہے لیکن نظر نہیں آتا

    اگر یہ تم ہو تو ثابت کرو کہ یہ تم ہو

    گیا ہوا تو کوئی لوٹ کر نہیں آتا

    یہ دل بھی کیسا شجر ہے کہ جس کی شاخوں پر

    پرندے آتے ہیں لیکن ثمر نہیں آتا

    یہ جمع خرچ زبانی ہے اس کے بارے میں

    کوئی بھی شخص اسے دیکھ کر نہیں آتا

    ہماری خاک پہ اندھی ہوا کا پہرہ ہے

    اسے خبر ہے یہاں کوزہ گر نہیں آتا

    یہ بات سچ ہے کہ اس کو بھلا دیا میں نے

    مگر یقیں مجھے اس بات پر نہیں آتا

    نظر جمائے رکھوں گا میں چاند پر تابشؔ

    کہ جب تلک یہ پرندہ اتر نہیں آتا

    مأخذ :
    • کتاب : Ishq Abaab (Pg. 277)
    • Author : Abbas Tabish
    • اشاعت : 2011

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے