وہ خوش سخن تو کسی پیروی سے خوش نہ ہوا

رؤف خیر

وہ خوش سخن تو کسی پیروی سے خوش نہ ہوا

رؤف خیر

MORE BYرؤف خیر

    وہ خوش سخن تو کسی پیروی سے خوش نہ ہوا

    مزاج لکھنوی و دہلوی سے خوش نہ ہوا

    ملال یہ ہے کہ آخر بچھڑ گیا مجھ سے

    وہ ہم سفر جو مری خوش روی سے خوش نہ ہوا

    تجھے خبر بھی ہے کیا کیا خیال آتا ہے

    کہ جی ترے سخن ملتوی سے خوش نہ ہوا

    فقیر شاہ نہیں شاہ ساز ہوتا ہے

    یہ خوش نظر نگہ خسروی سے خوش نہ ہوا

    سجے ہوئے ہیں ابھی دل میں خواہشات کے بت

    یہ سومنات کبھی غزنوی سے خوش نہ ہوا

    وہ آدمی ہے جو آب حیات کا پیاسا

    شراب عیسوی و موسوی سے خوش نہ ہوا

    وہ کم سخن تو مرا دشمن سخن نکلا

    غزل سے خوش نہ ہوا مثنوی سے خوش نہ ہوا

    اسی کو آیا سر آنکھوں پہ بیٹھنے کا ہنر

    جو اپنی حیثیت ثانوی سے خوش نہ ہوا

    رؤف خیرؔ بھلا تم سے کیسے خوش ہوگا

    وہ مولوی جو کسی مولوی سے خوش نہ ہوا

    RECITATIONS

    رؤف خیر

    رؤف خیر

    رؤف خیر

    وہ خوش سخن تو کسی پیروی سے خوش نہ ہوا رؤف خیر

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY