وہ مصاف زیست میں ہر موڑ پر تنہا رہا

علقمہ شبلی

وہ مصاف زیست میں ہر موڑ پر تنہا رہا

علقمہ شبلی

MORE BYعلقمہ شبلی

    وہ مصاف زیست میں ہر موڑ پر تنہا رہا

    پھر بھی ہونٹوں پر نہ اس کے کوئی بھی شکوہ رہا

    جو سدا تشنہ لبوں کے واسطے دریا رہا

    عمر بھر وہ خود بہ نام دوستاں پیاسا رہا

    عقل حیراں ہے جنوں بھی دم بخود ہے سوچ کر

    وہ ہجوم کشتگاں میں کس طرح زندہ رہا

    پھولنے پھلنے کا موقع تو کہاں ان کو ملا

    نیم جاں پودوں پہ جب تک آپ کا سایہ رہا

    علقمہ شبلیؔ ہوا کیسی چلی گلزار میں

    آشیاں میں بھی پرندہ وقت کا سہما رہا

    مآخذ:

    • کتاب : Aiwan (Pg. 82)
    • Author : Manazir Ashiq Harganvi & Shahid Nayeem
    • مطبع : Nirali Duniya (1998)
    • اشاعت : 1998

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY