وہ ملے تو بے تکلف نہ ملے تو بے ارادہ

محمد دین تاثیر

وہ ملے تو بے تکلف نہ ملے تو بے ارادہ

محمد دین تاثیر

MORE BYمحمد دین تاثیر

    وہ ملے تو بے تکلف نہ ملے تو بے ارادہ

    نہ طریق آشنائی نہ رسوم جام و بادہ

    تری نیم کش نگاہیں ترا زیر لب تبسم

    یونہی اک ادائے مستی یونہی اک فریب سادہ

    وہ کچھ اس طرح سے آئے مجھے اس طرح سے دیکھا

    مری آرزو سے کم تر مری تاب سے زیادہ

    یہ دلیل خوش دلی ہے مرے واسطے نہیں ہے

    وہ دہن کہ ہے شگفتہ وہ جبیں کہ ہے کشادہ

    وہ قدم قدم پہ لغزش وہ نگاہ مست ساقی

    یہ تراش زلف سرکش یہ کلاہ کج نہادہ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY