وہ نہیں یارو کسی بھی بات میں

طاہر عدیم

وہ نہیں یارو کسی بھی بات میں

طاہر عدیم

MORE BYطاہر عدیم

    وہ نہیں یارو کسی بھی بات میں

    جیت کر بھی جو مزہ ہے مات میں

    ہر کسی کے گرد لوگوں کا ہجوم

    ہر کوئی تنہا ہے اپنی ذات میں

    دیکھنے والے انہیں پڑھ غور سے

    ایک اک دنیا ہے ان ذرات میں

    کھا گئی اب تک یہ کتنے آفتاب

    راز ہے مضمر عجب اس رات میں

    بے گناہوں کے لہو کی سرخیاں

    جا بجا بکھری ہیں اخبارات میں

    آؤ کاٹیں کیک کو امسال بھی

    آنسوؤں کی اس بھری برسات میں

    بچ کے رہنا ہم سے اے دشت جنوں

    اس کا سایا ہے ہمارے سات میں

    اے سفیران ضیا اب تم کہو

    اب کے سورج ہے ہمارے ہات میں

    باب میں اس کے ہے طاہرؔ آج بھی

    ایک سناٹا سا کائنات میں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے