وہ پاس آئے تو دل بے قرار ہونے لگا

شوق مرادابادی

وہ پاس آئے تو دل بے قرار ہونے لگا

شوق مرادابادی

MORE BYشوق مرادابادی

    وہ پاس آئے تو دل بے قرار ہونے لگا

    سکون دل کا مرے انتشار ہونے لگا

    ہے راز کیا اے محبت بتا دے ہم کو ذرا

    قریب آنے پہ کیوں انتظار ہونے لگا

    ذرا سمجھنے دے ساقی یہ ماجرا کیا ہے

    کہ جام پینے سے پہلے خمار ہونے لگا

    پھر آسمان مقدر پہ کوئی ہلچل ہے

    کہ ناگہاں مرے دل پہ غبار ہونے لگا

    کبھی وہ آ بھی سکیں گے ہمیں یقیں تو نہ تھا

    ملے جو خواب میں کچھ اعتبار ہونے لگا

    کیا جو یاد انہیں آ گئے تصور میں

    ہے شعر کچھ تو ہمیں اختیار ہونے لگا

    بہار ہے کہ خزاں شوقؔ ہم یہی جانے

    کہ ان کے آنے سے رنگ و بہار ہونے لگا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY