وہ پو پھٹی وہ کرن سے کرن میں آگ لگی

ادیب سہارنپوری

وہ پو پھٹی وہ کرن سے کرن میں آگ لگی

ادیب سہارنپوری

MORE BYادیب سہارنپوری

    وہ پو پھٹی وہ کرن سے کرن میں آگ لگی

    وہ شب کی زلف شکن در شکن میں آگ لگی

    سلگ اٹھی وہ ردائے نجوم و کاہکشاں

    وہ دیکھ دامن چرخ کہن میں آگ لگی

    نشاط گرمیٔ محفل تھی جس کی تابانی

    اسی چراغ سے کیوں انجمن میں آگ لگی

    ہزار شمس و قمر بجھ گئے پہ یہ نہ بجھی

    یہ کس دیئے سے پتنگوں کے من میں آگ لگی

    تمام عمر کے آنسو اسے بجھا نہ سکے

    جو دل سے تا بہ جگر دم زدن میں آگ لگی

    بھلا سکے گی نہ دنیا یہ حادثہ کہ ادیبؔ

    چراغ لالہ و گل سے چمن میں آگ لگی

    مآخذ:

    • کتاب : Nuquush Lahore (Pg. 349)
    • Author : Mohd Tufail
    • مطبع : Idara Farog-e-urdu, Lahore (Feb.1956)
    • اشاعت : Feb.1956

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY