وہ رہ و رسم نہ وہ ربط نہاں باقی ہے

رام کرشن مضطر

وہ رہ و رسم نہ وہ ربط نہاں باقی ہے

رام کرشن مضطر

MORE BYرام کرشن مضطر

    وہ رہ و رسم نہ وہ ربط نہاں باقی ہے

    پھر بھی اس دل کو محبت کا گماں باقی ہے

    اب بھی لوگوں کی زباں پر ہیں کئی افسانے

    اپنا قصہ بہ حدیث دگراں باقی ہے

    اب نہیں مجھ کو میسر ترا دامن پھر بھی

    جوشش دیدۂ خوں ناب فشاں باقی ہے

    گل و نسریں کے تصور سے مری سانسوں میں

    نکہت زلف مسیحا نفساں باقی ہے

    مدتیں گزریں تری دید کو پر آنکھوں میں

    آج بھی رقص بہاراں کا سماں باقی ہے

    تیرے انداز ستم تیرے تغافل کے نثار

    دل میں اک حسرت بے نام و نشاں باقی ہے

    آہ یہ جادۂ پر خم یہ بھیانک جنگل

    دل درماندہ و عمر گزراں باقی ہے

    دل مضطر کو اب امید ملاقات نہیں

    یاد تیری مگر اے دشمن جاں باقی ہے

    مآخذ :
    • کتاب : Mujalla Dastavez (Pg. 416)
    • Author : Aziz Nabeel
    • مطبع : Edarah Dastavez (2013-14)
    • اشاعت : 2013-14

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY