وہ رنگ تمنا ہے کہ صد رنگ ہوا ہوں

اختر ہوشیارپوری

وہ رنگ تمنا ہے کہ صد رنگ ہوا ہوں

اختر ہوشیارپوری

MORE BYاختر ہوشیارپوری

    وہ رنگ تمنا ہے کہ صد رنگ ہوا ہوں

    دیکھو تو نظر ہوں جو نہ دیکھو تو صدا ہوں

    یا اتنا سبک تھا کہ ہوا لے اڑی مجھ کو

    یا اتنا گراں ہوں کہ سر راہ پڑا ہوں

    چہرے پہ اجالا تھا گریباں میں سحر تھی

    وہ شخص عجب تھا جسے رستے میں ملا ہوں

    کب دھوپ چلی شام ڈھلی کس کو خبر ہے

    اک عمر سے میں اپنے ہی سائے میں کھڑا ہوں

    جب آندھیاں آئی ہیں تو میں نکلا نہ گھر سے

    پتوں کے تعاقب میں مگر دوڑ پڑا ہوں

    مآخذ:

    • کتاب : Ghazal Calendar-2015 (Pg. 26.01.2015)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY