وہ سخی ہے تو کسی روز بلا کر لے جائے

ساقی فاروقی

وہ سخی ہے تو کسی روز بلا کر لے جائے

ساقی فاروقی

MORE BY ساقی فاروقی

    وہ سخی ہے تو کسی روز بلا کر لے جائے

    اور مجھے وصل کے آداب سکھا کر لے جائے

    میرے اندر کسی افسوس کی تاریکی ہے

    اس اندھیرے میں کوئی آگ جلا کر لے جائے

    یہ مری روح میں ندی کی تھکن کیسی ہے

    وہ سمندر کی طرح آئے بہا کر لے جائے

    ہجر میں جسم کے اسرار کہاں کھلتے ہیں

    اب وہی سحر کرے پیار سے آ کر لے جائے

    خاک آنکھوں میں ہے وہ خواب کہاں ملتا ہے

    جو مجھے قید مناظر سے رہا کر لے جائے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    وہ سخی ہے تو کسی روز بلا کر لے جائے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites