وو صنم جب سوں بسا دیدۂ حیران میں آ

ولی محمد ولی

وو صنم جب سوں بسا دیدۂ حیران میں آ

ولی محمد ولی

MORE BYولی محمد ولی

    وو صنم جب سوں بسا دیدۂ حیران میں آ

    آتش عشق پڑی عقل کے سامان میں آ

    ناز دیتا نہیں گر رخصت گل گشت چمن

    اے چمن‌‌ زار حیا دل کے گلستان میں آ

    عیش ہے عیش کہ اس مہ کا خیال روشن

    شمع روشن کیا مجھ دل کے شبستاں میں آ

    یاد آتا ہے مجھے وو دو گل باغ وفا

    اشک کرتے ہیں مکاں گوشۂ دامان میں آ

    موج بے تابیٔ دل اشک میں ہوئی جلوہ نما

    جب بسی زلف صنم طبع پریشان میں آ

    نالہ و آہ کی تفصیل نہ پوچھو مجھ سوں

    دفتر درد بسا عشق کے دیوان میں آ

    پنجۂ عشق نے بیتاب کیا جب سوں مجھے

    چاک دل تب سوں بسا چاک گریبان میں آ

    دیکھ اے اہل نظر سبزۂ خط میں لب لعل

    رنگ یاقوت چھپا ہے خط ریحاں میں آ

    حسن تھا پردۂ تجرید میں سب سوں آزاد

    طالب عشق ہوا صورت انسان میں آ

    شیخ یہاں بات تری پیش نہ جاوے ہرگز

    عقل کوں چھوڑ کے مت مجلس رندان میں آ

    درد منداں کو بجز درد نہیں صید مراد

    اے شہ ملک جنوں غم کے بیابان میں آ

    حاکم وقت ہے تجھ گھر میں رقیب بد خو

    دیو مختار ہوا ملک سلیمان میں آ

    چشمۂ آب بقا جگ میں کیا ہے حاصل

    یوسف حسن ترے چاہ زنخدان میں آ

    جگ کے خوباں کا نمک ہو کے نمک پروردہ

    چھپ رہا آ کے ترے لب کے نمک دان میں آ

    بس کہ مجھ حال سوں ہمسر ہے پریشانی میں

    درد کہتی ہے مرا زلف ترے کان میں آ

    غم سوں تیرے ہے ترحم کا محل حال ولیؔ

    ظلم کو چھوڑ سجن شیوۂ احسان میں آ

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY