وہ وفور لالہ و گل نہیں وہ نشاط قلب و نظر نہیں

قاضی غلام محمد

وہ وفور لالہ و گل نہیں وہ نشاط قلب و نظر نہیں

قاضی غلام محمد

MORE BYقاضی غلام محمد

    وہ وفور لالہ و گل نہیں وہ نشاط قلب و نظر نہیں

    جو ارم بکف تھی دم سحر وہ بہار شاخ و شجر نہیں

    یہ زمانہ فرصت غم اگر مجھے دے تو میں بھی دکھا سکوں

    کہ تجلیاں مرے شوق کی فقط ایک رقص شرر نہیں

    تری یاد باعث راحت تپش خیال تو ہے مگر

    میں ہجوم شوق کو کیا کروں مرے بس میں دیدۂ تر نہیں

    یہ رضائے یار کا پاس ہے کہ یہ سازشیں ہیں حواس کی

    مرے دل میں سوز فغاں تو ہے مرے لب پہ آہ سحر نہیں

    مرا شوق آبلہ پا سہی مری راہ راہ فنا سہی

    جو ترا خیال ہو راہ بر تو اندھیری رات کا ڈر نہیں

    تو کمال شوق سے ساز اٹھا مری جان تاروں کے گیت گا

    تری بزم گاہ طرب میں اب کسی دل جلے کا گزر نہیں

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY