وہ زلف ہوا سے مجھے برہم نظر آئی

منیرؔ  شکوہ آبادی

وہ زلف ہوا سے مجھے برہم نظر آئی

منیرؔ  شکوہ آبادی

MORE BYمنیرؔ  شکوہ آبادی

    وہ زلف ہوا سے مجھے برہم نظر آئی

    اڑتی ہوئی ناگن قد آدم نظر آئی

    ہے پنجۂ رنگیں میں ہمارا دل بے تاب

    یہ آگ تو سیماب سے باہم نظر آئی

    آغاز میں ہستی کی اجل آ گئی اے دل

    جو چیز مؤخر تھی مقدم نظر آئی

    شبنم کی ہے انگیا تلے انگیا کے پسینہ

    کیا لطف ہے شبنم تہ شبنم نظر آئی

    مجروح کیا الفت ابرو نے دم حج

    محراب حرم ناخن ضیغم نظر آئی

    ادنیٰ ہے یہ اے جان سراپے کی لطافت

    پرچھائیں تری حور مجسم نظر آئی

    زنجیر پہننے سے ہوا قیدیوں کا نام

    ہر ایک کڑی حلقۂ خاتم نظر آئی

    توبہ کی مگر نشہ سے اس حور شیم نے

    کیوں آتش مے نار جہنم نظر آئی

    تم بالوں کو کھولے ہوے گلشن میں جو آئے

    ہر شاخ شجر زلف نمط خم نظر آئی

    بد ظن نہ ہو کس طرح منیرؔ آج خدارا

    مسکی ہوئی اے بت تری محرم نظر آئی

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY