وفور شوق کی رنگیں حکایتیں مت پوچھ

علی سردار جعفری

وفور شوق کی رنگیں حکایتیں مت پوچھ

علی سردار جعفری

MORE BYعلی سردار جعفری

    وفور شوق کی رنگیں حکایتیں مت پوچھ

    لبوں کا پیار نگہ کی شکایتیں مت پوچھ

    کسی نگاہ کی نس نس میں تیرتے نشتر

    وہ ابتدائے محبت کی راحتیں مت پوچھ

    وہ نیم شب وہ جواں حسن وہ وفور نیاز

    نگاہ و دل نے جو کی ہیں عبادتیں مت پوچھ

    ہجوم غم میں بھی جینا سکھا دیا ہم کو

    غم جہاں کی ہیں کیا کیا عنایتیں مت پوچھ

    یہ صرف ایک قیامت ہے چین کی کروٹ

    دبی ہیں دل میں ہزاروں قیامتیں مت پوچھ

    بس ایک حرف بغاوت زباں سے نکلا تھا

    شہید ہو گئیں کتنی روایتیں مت پوچھ

    اب آج قصۂ دارا و جم کا کیا ہوگا

    ہمارے پاس ہیں اپنی حکایتیں مت پوچھ

    نشان ہٹلری و قیصری نہیں ملتا

    جو عبرتوں نے لکھی ہیں عبارتیں مت پوچھ

    نشاط زیست فقط اہل غم کی ہے میراث

    ملیں گی اور ابھی کتنی دولتیں مت پوچھ

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے