یاد پھر بھولی ہوئی ایک کہانی آئی

مخمور سعیدی

یاد پھر بھولی ہوئی ایک کہانی آئی

مخمور سعیدی

MORE BYمخمور سعیدی

    یاد پھر بھولی ہوئی ایک کہانی آئی

    دل ہوا خون طبیعت میں روانی آئی

    صبح نو نغمہ بہ لب ہے مگر اے ڈوبتی رات

    میرے حصے میں تری مرثیہ خوانی آئی

    زرد رو تھا کسی صدمے سے ابھرتا سورج

    یہ خبر ڈوبتے تاروں کی زبانی آئی

    ہر نئی رت میں ہم افسردہ و دلگیر رہے

    یا تو گزرے ہوئے موسم کی جوانی آئی

    پا گئے زندگی نو کئی مٹتے ہوئے رنگ

    ذہن میں جب کوئی تصویر پرانی آئی

    خشک پتوں کو چمن سے یہ سمجھ کر چن لو

    ہاتھ شادابی رفتہ کی نشانی آئی

    یاد کا چاند جو ابھرا تو یہ آنکھیں ہوئیں نم

    غم کی ٹھہری ہوئی ندی میں روانی آئی

    دل بہ ظاہر ہے سبک دوش تمنا مخمورؔ

    پھر طبیعت میں کہاں کی یہ گرانی آئی

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    یاد پھر بھولی ہوئی ایک کہانی آئی نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY