یادوں کے سب رنگ اڑا کر تنہا ہوں

فاطمہ حسن

یادوں کے سب رنگ اڑا کر تنہا ہوں

فاطمہ حسن

MORE BYفاطمہ حسن

    یادوں کے سب رنگ اڑا کر تنہا ہوں

    اپنی بستی سے دور آ کر تنہا ہوں

    کوئی نہیں ہے میرے جیسا چاروں اور

    اپنے گرد اک بھیڑ سجا کر تنہا ہوں

    جتنے لوگ ہیں اتنی ہی آوازیں ہیں

    لہجوں کا طوفان اٹھا کر تنہا ہوں

    روشنیوں کے عادی کیسے جانیں گے

    آنکھوں میں دو دیپ جلا کر تنہا ہوں

    جس منظر سے گزری تھی میں اس کے ساتھ

    آج اسی منظر میں آ کر تنہا ہوں

    پانی کی لہروں پر بہتی آنکھوں میں

    کتنے بھولے خواب جگا کر تنہا ہوں

    میرا پیارا ساتھی کب یہ جانے گا

    دریا کی آغوش تک آ کر تنہا ہوں

    اپنا آپ بھی کھو دینے کی خواہش میں

    اس کا بھی اک نام بھلا کر تنہا ہوں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY