یاں تلک کے ہے ترے ہجر میں فریاد کہ بس

تاباں عبد الحی

یاں تلک کے ہے ترے ہجر میں فریاد کہ بس

تاباں عبد الحی

MORE BYتاباں عبد الحی

    یاں تلک کے ہے ترے ہجر میں فریاد کہ بس

    نہ ہوا تو بھی کبھی ہائے یہ ارشاد کہ بس

    ایک بلبل بھی چمن میں نہ رہی اب کی فصل

    ظلم ایسا ہی کیا تو نے اے صیاد کہ بس

    بے ستوں کھود کے سر پھوڑ دیا جی اپنا

    کام ایسا ہی ہوا تجھ سے اے فرہاد کہ بس

    دل کی حسرت نہ رہی دل میں مرے کچھ باقی

    ایک ہی تیغ لگا ایسی اے جلاد کہ بس

    عشق میں اس کے بگولے کہ ترا اے تاباںؔ

    خاک اپنی کو دیا یاں تئیں برباد کہ بس

    مأخذ :
    • Deewan-e-Taban Rekhta Website)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY