یاروں کی ہم سے دل شکنی ہو سکے کہاں (ردیف .. ے)

امام بخش ناسخ

یاروں کی ہم سے دل شکنی ہو سکے کہاں (ردیف .. ے)

امام بخش ناسخ

MORE BYامام بخش ناسخ

    یاروں کی ہم سے دل شکنی ہو سکے کہاں

    یاں پاس ہے نہ خاطر اغیار توڑیئے

    ہم جور چشم یار سے دم مارتے نہیں

    یعنی روا ہے کب دل بیمار توڑیئے

    یاں درد سر خمار سے ہے واں دکان بند

    ٹکرا کے سر کو اب در خمار توڑیئے

    ٹکراؤں واں جو سر تو وہ کہتا ہے کیا مجھے

    صاحب نہ مجھ غریب کی دیوار توڑیئے

    دم توڑنا ہے فرقت جاناں میں اپنا کام

    کچھ کوہ کن نہیں ہیں جو کہسار توڑیئے

    ناسخؔ بقول افسح ہندوستاں کبھی

    زاہد کا دل نہ خانۂ خمار توڑیئے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY