یک بیک منظر ہستی کا نیا ہو جانا

ثروت حسین

یک بیک منظر ہستی کا نیا ہو جانا

ثروت حسین

MORE BYثروت حسین

    یک بیک منظر ہستی کا نیا ہو جانا

    دھوپ میں سرمئی مٹی کا ہرا ہو جانا

    صبح کے شہر میں اک شور ہے شادابی کا

    گل دیوار، ذرا بوسہ نما ہو جانا

    کوئی اقلیم نہیں میرے تصرف میں مگر

    مجھ کو آتا ہے بہت فرماں روا ہو جانا

    زشت اور خوب کے مابین جلایا میں نے

    جس گل سرخ کو تھا شعلہ نما ہو جانا

    چشم کا آئینہ خانے میں پہنچنا ثروتؔ

    دل درویش کا مائل بہ دعا ہو جانا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY