یم بہ یم پھیلا ہوا ہے پیاس کا صحرا یہاں

حمایت علی شاعر

یم بہ یم پھیلا ہوا ہے پیاس کا صحرا یہاں

حمایت علی شاعر

MORE BYحمایت علی شاعر

    یم بہ یم پھیلا ہوا ہے پیاس کا صحرا یہاں

    اک سراب تشنگی ہے موجۂ صہبا یہاں

    روشنی کے زاویوں پر منحصر ہے زندگی

    آپ کے بس میں نہیں ہے آپ کا سایہ یہاں

    آتے آتے آنکھ تک دل کا لہو پانی ہوا

    کس قدر ارزاں ہے اپنے خون کا سودا یہاں

    تیرے میرے درمیاں حائل رہی دیوار حرف

    رکھ لیا اک بات نے ہر بات کا پردا یہاں

    دیکھیے تو یہ جہاں ہے اک جہان آب و گل

    سوچئے تو ذرے ذرے میں ہے اک دنیا یہاں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے